From Gaza… without Love…

11th July, 2014

اٹھو، دیکھو، سنو، جانو بھی اب کہ
گزرتا جا رہا ہے آب سر سے
یہ خواب بے ہسی اب ختم کر دے
جنازے اٹھ رہے ہیں میرے گھر سے

نبی کی میرے ہی کچھ لاج رکھ لے
کہ بن جا ایک پل کو ہی مسلمان
بچا لے گھر میرا اس آگ سے تو
قبل اس کے کہ تجھ پے آن برسے

نہیں بن گر تو پاتا اک مسلمان
میری یہ آہ سن انسان بن کر
کہ اتنی بے ہسی کیسے ہے تجھ میں
ہوا کیسے تو بد تر جانور سے

نہ گم ہو آل اپنی کی خوشی میں
تیرے ذمے میری اولاد بھی ہے
تیرے گھر میں سکوں بے سود ہے گر
یہاں بچا میرا جینے کو ترسے

خدا سے مانگتا ہوں قہر اس کا
کہ ظالم کو نشان عبرت بنا دے
بتا تیرے لئے پھر کیا میں مانگوں
خدا جانے تو چپ ہے کس کے ڈر سے

One thought on “From Gaza… without Love…

  1. Sir great, u could be a good poet. U depicted it very well.But listen,
    Kab ashk bahanay say kati hai shab e hijran
    kab koi bala sirf duaon say tali haiiiii.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s