کسے قاتل میں کہوں اور کسے مقتول کہوں

13th September, 2014

تیری جمہوریت کو ہو جو منظور تو میں

بات جو تجھ کو لگے غیر معقول کہوں

 

 

آج مظلوم ہے کٹہرے میں کھڑا پوچھ رہا

کسے قاتل میں کہوں اور کسے مقتول کہوں

 

 

تباہ کر کے شہر خود کو خطا کار کہے

کیسے وحشت کو تیری میں ذرا سی بھول کہوں

 

 

میرے شکووں کو تو سازش، مجھے غدار کہے

وطن فروش تجھے حاکم میں با اصول کہوں؟

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s