ایوان ایک ہے

خاموش قتل پہ، سداؤں سے بے خبر

آیی جو بات ذات پہ، ایوان ایک ہے

طاقت کی اقتدار کی صبح رہے سدا

آیے نا کبھی رات کہ ایوان ایک ہے

 

 

قانون نہ دستور نہ کوئی اصول ہے

آیین شکن بھی ہیں اور پاسدار بھی

الزام سب درست، سچے ہو تم مگر

باتوں کی ایک بات کہ ایوان ایک ہے

 

 

مرتی ہے گر عوام بے یار و مددگار

حالات کا نہیں ہے تقاضا کہ ایک ہوں

کرسی جو بچھڑنے کا کھٹکا ہوا ہے تو

ایسے بنے حالات کہ ایوان ایک ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s